انتخابپاکستانتازہ ترین

نواز شریف حکومت اور عوام کو دھوکا دے کر گئے، اسلام آباد ہائیکورٹ

اسلام آباد ہائی کورٹ نے العزیزیہ اور ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا کے خلاف نواز شریف کی اپیلوں پر سماعت کے دوران ریمارکس دیے ہیں کہ نواز شریف حکومت اورعوام کو دھوکا دے کر گئے ہیں۔

عدالت نے کہا کہ ملزم لندن میں بیٹھ کر حکومت اور عوام پر ہنستا ہوگا، نہایت شرمندگی کا مقام ہے۔

وفاقی دارالحکومت کی عدالت عالیہ میں جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی پر مشتمل 2 رکنی بینچ نے العزیزیہ اور ایون فیلڈ ریفرنسز میں نواز شریف کی سزا کے خلاف اپیلوں پر سماعت کی۔

سماعت کا احوال

عدالت میں ایڈیشنل اٹارنی جنرل طارق کھوکھر نے نواز شریف کے وارنٹ گرفتاری سے متعلق تعمیل کے حوالے سے رپورٹ پیش کی ۔

رپورٹ کے مطابق پاکستانی ہائی کمیشن کے نمائندے وارنٹ کی تعمیل کرانے ایون فیلڈ اپارٹمنٹ گئے تو وہاں انہیں وصول کرنے سے انکار کیا گیا۔

عدالت کے استفسار پر ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے بتایا کہ نوازشریف کی رہائش گاہ پر وقار احمد نام کے شخص نے وارنٹ گرفتاری وصول کرنے سے انکار کیا۔

اس پر جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیے کہ دیکھنا ہے کہ کیا جان بوجھ کر عدالتی کارروائی سے راہ فرار اختیار کی جا رہی ہے؟

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے عدالت کے سامنے بتایا کہ ہائی کمیشن نے کامن ویلتھ آفس سے رابطہ کیا تو وہاں سے جواب ملا کہ عدالتی حکم پر عملدرآمد ان کے اختیار میں نہیں۔

اس پر عدالت نے ریمارکس دیے کہ اس کا مطلب ہے کامن ویلتھ آفس ہمیں سہولت دینے کو تیار نہیں۔ ہمیں شواہد کے ساتھ خود کو مطمئن کرنا ہے کہ عدالت نے وارنٹس کی تعمیل کیلئے اپنی پوری کوشش کی۔

نیب کے ایڈیشنل پراسیکیوٹر جنرل جہانزیب بھروانہ نے عدالت کو بتایا کہ نواز شریف کے وکیل بتا چکے ہیں کہ انہوں نے اپنے موکل کو عدالتی حکم سے آگاہ کر دیا ہے۔

اس پر عدالت نے سخت ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ جو سرکاری دستاویزات آ رہی ہیں انہیں ریکارڈ کا حصہ بنائیں گے، پھر مفرور قرار دیں گے۔

جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ طریقہ کار پر درجہ بہ درجہ عمل کیا جائے گا تاکہ کل ملزم کوئی سہارا نہ لے سکے، انہوں نے کہا کہ ملزم حکومت اورعوام کو دھوکا دے کر گیا ہے۔

اس موقع پر جسٹس محسن اختر کیانی نے کہا کہ ملزم لندن میں بیٹھ کر حکومت اور عوام پر ہنستا ہو گا، نہایت شرمندگی کا مقام ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے نواز شریف کو مکمل موقع دیا اور اس کے بعد اپیلوں کو سن کر فیصلہ کریں گے۔

عدالت نے کہا کہ درخواست گزار پوری قوم سے خطاب کر رہا ہے، کیا ہم لکھ سکتے ہیں کہ ملزم نواز شریف کہیں روپوش ہوا ہے؟

بعد ازاں کیس کی سماعت 7 اکتوبر تک ملتوی کردی گئی۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button